آرٹیکل 63 اے کی تشریح کیلئےصدارتی ریفرنس پر سماعت جاری 

Must read


 آرٹیکل 63 اے کی تشریح کیلئےصدارتی ریفرنس پر سماعت جاری 

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن )  سپریم کورٹ آرٹیکل 63 اے کی تشریح کیلئے صدارتی ریفرنس پر سماعت جاری ہے جہاں پاکستان پیپلزپارٹی کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے دلائل دیے ۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں  بینچ کیس کی سماعت کر رہا ہے ،  فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ   1997 میں 13ویں ترمیم 58 ٹوبی کوختم کیاگیاتھا،  مشرف نے 2002 میں ایل ایف اوکےذریعے 58 ٹوبی کوبحال کیا،2010 میں 18ویں ترمیم کے ذریعے  58 ٹو بی  دوبارہ ختم ہوئی ، 14ویں ترمیم میں آرٹیکل 63 اے   کو آئین میں شامل کیا گیا ، 14ویں ترمیم میں  پارٹی سربراہ کو بہت وسیع اختیارات تھے ،  ایکشن کمیشن کے پاس  پارٹی سربراہ کا فیصلہ مسترد کرنے کا اختیار نہیں تھا ،  2002   میں صدارتی آرڈر کے ذریعے 63 اے  میں ترمیم کر دی گئی ، 2002 کی تبدیلی کے ذریعے پارٹی ہیڈ کے  اختیارات کوکم کر دیاگیا ۔

فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ 18ویں ترمیم  میں پارتی سربراہ کے اختیارات کو سربراہ پارلیمانی پارٹی کو دے دیا گیا ، 18ویں ترمیم میں    63  اے کے تحت اختیار کو مزید کم کر دیا گیا، 18 ویں ترمیم کے ذریعے حتمی فیصلے کا اختیار سپریم کورٹ کو دے دیا گیا ، 18 ویں ترمی میں الیکشن کمیشن کو تین ماہ میں فیصلہ کرنے کا پابند کیا گیا۔

مزید :

اہم خبریںقومی





Source link

More articles

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Latest article