فارن فنڈنگ کیس میں پی ٹی آئی کو بڑا ریلیف مل گیا 30 روز میں فیصلہ سنانے کا حکم معطل 

Must read


فارن فنڈنگ کیس میں پی ٹی آئی کو بڑا ریلیف مل گیا، 30 روز میں فیصلہ سنانے کا حکم …

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) اسلام آبا دہائیکورٹ سے پاکستان تحریک انصاف ( پی ٹی آئی) کو بڑا ریلیف مل گیا ، عدالت نے الیکشن کمیشن کو فارن فنڈنگ کیس کا فیصلہ  30 روز میں سنانے کا حکم معطل کر دیا۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ کی زیر سربراہی دو رکنی بینچ نے  پاکستان تحریک انصاف کی انٹرا کورٹ اپیل پر سماعت کی  اور سنگل بینچ کا 30 روز میں فیصلہ کرنے کا حکم معطل کر دیا۔عدالت نے الیکشن کمیشن ، اکبر ایس بابر اور 17 سیاسی جماعتوں کو نوٹس جاری کرتے ہوئے  17 مئی تک جواب طلب کرلیا۔ 

پی ٹی آئی کے وکیل شاہ خاور نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف نے دیگر 17  سیاسی جماعتوں  کی ممنوعہ فنڈنگ کی انکوائری کی درخواست  کی تھی ۔ چیف جسٹس  اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ یہ  الیکشن کمیشن کا کام ہے کہ ہر سال پارٹیز کی فنڈنگ کی انکوائری کرے ، کیا آپ نے  درخواستیں الیکشن  کمیشن میں دائر کی تھیں ؟۔وکیل شاہ خاور نے کہا کہ سکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ الیکشن کمیشن کو دی گئی تھی ۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ 2002 کے قانون میں ہے ممنوعہ فنڈ ثابت ہو تو فنڈ ضبط ہوتے ہیں ، الیکشن کمیشن سکروٹنی کمیٹی کے بعد کیا کر رہا ہے ؟۔ وکیل پی ٹی آئی نے بتایا کہ  الیکشن کمیشن کی کارروائی جاری ہے  ،27 کو سماعت ہے ،سنگل بینچ نے جو آبزرویشن دی وہ دائرہ اختیار سے تجاوز ہے ، سنگل بینچ نے کہا ممنوعہ فنڈ ثابت ہو تو پارٹی ، چیئرمین کو فیس کرنا پڑے گا، فارن فنڈ کا کہہ کر تاثر دیا جا رہا ہے یہ فارن ایڈ کی پارٹی ہے، ہائیکورٹ ماتحت عدالتوں کوسپر وائز کر سکتی ہے ، ڈائریکشن نہیں دے سکتی ۔

جسٹس بابر ستار نے ریمارکس دیے کہ آپ پٹیشن لے کر آئے ہیں کہ الیکشن کمیشن کو ایک اور ہدایت کی جائے ۔ وکیل شاہ خاور نے کہا کہ ہم جو پٹیشن لیکر آئے ہیں اس کی  نوعیت مختلف ہے ، سنگل بینچ نے فیصلے میں “فیس دی میوزک ” جیسی اصطلاح استعمال کی ۔

خیال رہے کہ پاکستان تحریک انصاف نے جسٹس محسن اختر کیانی کے فیصلے کے خلاف انٹراکورٹ اپیل دائر کی تھی ۔

مزید :

اہم خبریںقومی





Source link

More articles

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Latest article